Skip to main content

ترک جلالی و جمالی و فلسفہ Tark e Jalali o Jamali Ka Falsafa

سوال
*السلام علیکم ورحمتہ اللہ وبرکاتہ امید ہے کہ حضور بخیر ہونگے میرا سوال یہ ہے یہ جو عملیات  میں ترک جلالی و جمالی کی جو شرط لگائی جاتی ہے اس کے تعلق سے کافی پڑھا اور سنا ہے مگر جب میں اس مضمون پر پہنچاتو کافی پریشان ہوا یہ جو میٹر لکھا ہوا ہے اس کی حقیقت کیا ہے کیا واقعی میں ترک جلالی اور جمالی عملیات کی دنیا میں ضروری ہے یا نہیں اگر بندہ اللہ کا ذکر صدق دل سے کرتا ہے تو کیا اس کو روحانیت حاصل نہیں ہوئی? اور اگر کے جلالی اور جمالی کرنے کے باوجود پھر سے دل میں صداقت اور ذہین شفاف نہ ہو تو کیا عملیات کام کریں گے یا ہمارا  چلاہ ضائع ہوجائے گا برائے مہربانی تھوڑی سی اس مضمون پر نظر عنایت ہو جائے تو انشاءاللہ کافی سارے سوالات حل ہوجائیں گے اور ہم آپ کے مشکور ہوں گے*
*شہادت خان برکاتی شیرانی ناگور راجستھان انڈیا*


از صوفی محمد عمران رضوی القادری 
جواب
وعلیکم السلام و رحمۃ اللہ
ترکِ حیوانات جلالی و جمالی کا حاصل ملائکہ سے تشبہ پیدا کرنا ہے اور یہ تشبہ اس وقت پیدا ہوگا جب ہم ہر اس چیز کو ترک کر دیں گے جو ملائکہ کے متنفر ہونے کا باعث ہوں اور اس کی اصل احادیث سے ثابت چنانچہ فرمایا پیاز لہسن یا اس قسم کی بدبودار اشیاء کھا کر مسجد میں حاضر نا ہو کہ اس سے فرشتوں کو تکلیف ہوتی ہے  بخاری و مسلم میں حضرت جابر رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ جو اس درخت بودار سے کھائے وہ ہماری مسجد کے قریب نہ آئے کہ ملٰئکہ اس چیز سے اذیت پاتے ہیں جس چیز سےآدمی کو اذیت پہنچتی ہو اسی طرح سید عالم صلی اللہ علیہ وسلم  جب ہجرت کر کے مدینہ منورہ  تشریف لائے تو آپ  حضرت ابو ایوب انصاری رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے مکان میں قیام فرمایا ہوئے ایک مرتبہ حضور اقدس صلی اللہ علیہ وسلم کے کھانے میں لہسن کی بوٹی ڈالی گئی حضور نے اسے تناول نہیں فرمایا حضرت ابو ایوب انصاری رضی اللہ عنہ نے جب عرض کی یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم آپ نے بالکل بھی نہیں کھایا تو حضور اقدس صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا مجھے اس کھانے میں اُس بوٹی کی بو آ گئ تھی اور میں وہ شخص ہوں جو اپنے رب سے سرگوشیاں کرتا ہے لیکن تم اسے کھاوتمہارے لئے جائز ہے ،آدابدعاء میں اعلی حضرت عظیم البرکت رحمہ اللہ نے ارشاد فرمایا  جب قصدِ دعا ہو پہلے مسواک کر لے کہ اب اپنے رب سے مناجات کریگا، ایسی حالت میں رائحہ متغیّرہ (یعنی منہ کی بدبو)سخت ناپسند ہے خصوصاً حقّہ پینے والے، خصوصاً تمباکو کھانے والوں کو اس ادب کی رعایت ذکر ودعا ونماز میں نہایت اہم ہے، کچا لہسن پیاز کھانے پر حکم ہوا کہ مسجد میں نہ آئےوہی حکم یہاں بھی ہوگا، مع ہذا حضور اقدس صلی اللہ تعالیٰ علیہ وسلم فرماتے ہیں:''مسواک رب کو راضی کرنے والی ہے۔' اور ظاہر ہے کہ رضائے رب باعثِ حصولِ اَرب ہے (اللہ تعالیٰ کی رضا ، مراد ملنے کا سبب ہے)۔ اس سے معلوم ہوا کہ عام حالت میں بھی بندہ مومن کو ذکر اللہ کے لئے جزوی طور پر ہی سہی ترک جلالی و ترک مکروہات  کا حکم ہے اور یہ حکم  ہر قسم کے ذکر کے لئے عام ہے لیکن جب ذکر و اشغال اعمال تصریفیہ کہ طور پر بجا لایا جائے گا تو اب پیاز لہسن کا ترک کے ساتھ  کلیتاً  حیوانی غذائیں اور  فعل حیوانی کا ترک بھی لازم قرار پائے گا تاکہ ملائکہ سے کامل تشبہ پیدا ہوسکے  لہذا دعوت و اعمال میں محض صدق نیت کافی نہیں اگرچہ      
ذکر الہی کے لئے صدق نیت و خلوص قلبی کی ضرورت ایسے ہی ہے جیسے زندہ رہنے کے لئے جسم کو روح کی ضرورت ہوتی ہے اگر روح نہیں جسم مردہ ہے اسی طرح اگر خلوص و صدق نہیں تو ذکر و اشغال بے اثر لیکن ترک جلالی و جمالی ایک بالکل الگ چیز ہے  دعوت ملکیہ کے لئے جتنی ضرورت صدق نیت کی ہے اسی قدر حاجت ترک جلالی و جمالی کی بھی ہے  ترک حیوانات کو پرہیز اور صدق و صفاء کو دوا سے تعبیر کر سکتے ہیں کبھی تو صرف دوا سے شفاء مل جاتی ہے اور کبھی پرہیز کرنا بھی لازمی قرار پاتا ہے بلکہ دونو لازم و ملزوم ہو جاتے ہیں اب اگر کوئی یہ کہے کہ میں دوا تو پابندی سے کھا رہا ہوں پھر پرہیز کی کیا ضرروت تو اسے سمجھایا جائے گا ٹھیک ہے دوا سے آپ کو فائدہ ہوگا لیکن  بعض مرض میں مکمل فائدے کے لئے مرض بڑھنے کی وجہ پر بھی قدغن لگانا ضروری ہوتا ہے اس لئے آپ سے پرہیز کا بھی کہا گیا ، انسان جو کہ انواع اقسام کے عوارضاتِ قلبی و روحی میں مبتلا ہوتا ہے اور اس کی وجہ قوتِ شہویہ اور قوت غضبیہ ہیں  اور حیوانی غذائیں ان قوتوں کو امداد فراہم کرتی ہین ان سے انسان کے اندر صفات بہیمیہ و سبعیہ پیدا ہوتی ہیں تو ان صفات کو مرض جانئے اور حیوانی غذاوں کو امراض قلبی و روحانی  میں اضافے کی وجہ سمجھئے اس لئے مشائخ کرام فرمایا کرتے ہیں کہ عام حالت میں بھی چالیس دن لگاتار گوشت مت کھانا کہ اس سے تمہارا دل سخت ہو جائے گالہذا  عاملین ِ با صفاء نے جو یہ قیود ترک حیوانات کے لگائے ہیں اس میں حکمت یہی ہے کہ انسان دوران چلہ ایسی مزمومم صفات سے خالی ہو اور جیسا کہ حضرت شاہ ولی اللہ محدث دہلوی رحمہ اللہ نے فرمایا کہ دعوتِ ملکیہ اور اعمالِ تصریفیہ میں ملائکہ سفلیہ ارضیۃ جو زمین و آسمان کے درمیان ہیں ان سے تشبہ پیدا کرے یہ اس لئے فرمایا تاکہ صاحب دعوت کی تدبیر اصل نظامِ عالم کی تدبیر کے موافق ہوجائے لہذا ترک حیونات جلالی و جمالی اور ہر قسم کی بدبو دار چیز کھانے سے پرہیز کا تعلق ملائکہ سے تشبہ پیدا کرنا ہے نفحات الانس میں میں نے پڑھا کہ ایک ولی اللہ جن کے پاس فرشتے آیا کرتے تھے انہوں نے ایک مرتبہ کسی چیونٹی کو مار دیا اس کے بعد فرشتوں کا موقوف  ہو گیا  یہ اسی وجہ سے ہوا کہ اس بزرگ کو ملائکہ سے کامل تشبہ نہ رہا اس لئے دوران چلہ کسی بھی جاندار کو مارنے کی ممانعت کی جاتی ہے اور اسے محرمات احرامی کہتے ہیں   امید اس قدر تفصیل سے ترک جلالی و جمالی کا فلسفہ سمجھ آگیا ہو گا  اللہ تعالی ہم سب کو علم نافع عطاء فرمائے آمین

Popular posts from this blog

محبت و تسخیر کے وظاءف Mohabbat aur Taskhir ke Wazaif (Wazaif For Love and Attraction)

جائز محبت میں کامیابی اور پسند کی شادی کے لئے ہمارے یہاں سے زبردست اور لاجواب عمل تیار کر کے دیا جاتا ہے بحمد اللہ اب تک ہزاروں افراد فائدہ اٹھا چکے ہیں،اس سلسلہ میں چراغِ محبت ،لوحِ تسخیر اکبر، لوحِ زہرہ خاص،لوحِ شرفِ زہرہ،لوح مخمس اور مختلف اقسام کے با موکل عملیات تیار کر کے حاجتمندوں کو دیا جاتا ہے ان میں اربعہ عناصر کا عمل ہماریہاں کا بہت مشہور ہے بیرون ممالک کے حضرات و خواتین کو DHL یا UPS وغیرہ سے بھیجا جاتا ہے ہدیہ مناسب ہے                                                                                                         صوفی محمد عمران رضوی القادری

BARA BURJO.N KI KHASIYAT SIRF AURTO.N KE LIYE بارہ برجوں کی خاصیت صرف عورتوں کے لئے (Peculiarity Of Zodiac Sign For Women )

  BARA BURJO.N KI KHASIYAT SIRF AURTO.N KE LIYE JIS AURAT KE WASTE DEKHNA HO USKA USKI MAA KE NAAM KE A’DAAD JODH JOD KAR BARA SE TAQSEEM KARE.N AGAR 1 BACHE TO HAMAL 2 BACHE TO SAUR 3 BACHE TO JOOZA 4 BACHE TO SARTAAN 5 BACHE TO ASAD 6 BACHE TO SUNBLA 7 BACHE TO MIZAAN 8 BACHE TO AQRAB 9 BACHE QAUS 10 BACHE TO JADDI 11 BACHE TODALU AUR AGAR PURA TAQSEEM HOJAYE TO HAUT JO ADAD HASIL HO USKA SAMRA DEKH LE.N ·         BURJ E HAMAL SITARA USKA MAREEKH HAI-IS TAA’LA KI SURAT KHUSHRAFTAR,KHUSH GUFTAR, AQALMAND AUR HOSHIYAR HOGI-SEENA,GARDAN YA BAAZU PAR TIL HOGA JO NEK BAKHTI KA NISHAN HAI-JHOOT BOLNA AUR AMANAT ME KHAYANAT KARNA USKO SAAZGAAR NAHIN- JAB GAZABNAAK HONA AUR JALD HI GUSSA KA FARO HONA USKI AADAT ME DAKHIL HOGA-PADOS ME EK SHAKHS USKA DUSHMAN HAI USSE HOSHIYAR RAHE-AWWAL UMR ME BAHUT RANJO MUSIBAT UTHAYEGI-AAKHIR UMR ARAAM SE GUZRE GI WALDAIN SE RAHAT PAYEGI-SHOHAR AKSAR MEHERBAN RAHEGA  AULAAD HOGI MAGAR JIYEGI KAM-UMME SABYAAN(MASA-AN)KA FASAAD RAHEGA-DUA DAWA KARNE

ADAD NIKALNE KA TARIQA اعداد نکالنے کا طریقہ (Method Of Reckoning Number By Abjad )

ADAD NIKALNE KA AASAN TARIQA KISI BHI NAAM KA ADAD NIKALNE KA AASAN TARIQA YEH HAI KE NAAM KE HUROOF KO MUFARRAD YANI ALAG ALAG LIKH LE.N PHIR IN HUROOF KE ADAAD ABJAD QAMRI SE HAASIL KARKE SAB KO JAMA KARDE.N TO NAAM YA KISI BHI KALMA KA SAHEEH ADAD BAR AAMAD HOJAYEGA MASLAN HUME.N KASHIF KHAN KE ADAD NIKALNE HAIN TO YOU.N LIKHE.N GE KAAF ک 20 ALIF الف 1 SHEEN ش 300 FA ف 80 KHA خ 600 ALIF الف 1 NOON ن 50 IN SAB KO JAMA KARNE PAR 1052 ADAD NIKLA BAHISAAB ABJAD QAMRI YEH KASHIF KHAN KA ADAD MAKTUBI HAASIL HUA IS TARIQE SE AAP KISI BHI SHAI KA ADAD BA AASANI NIKAL SAKTE HAI.N JADWAL ABJAD QAMRI YEH HAI ا ب ج د ہ و ز ح ط ی 1 2 3 4 5 6 7 8 9 10 ک ل م ن س ع ف ص ق ر 20 30 40 50 60 70 80